Home>Posts>یا ابا صالح المھدیؑ – نور درویش

یا ابا صالح المھدیؑ – نور درویش

|
30-April-2020

میں نے ایک بات بہت شدت سے محسوس کی ہے کہ امام علیؑ سے لیکر امام العصرؑ تک، ہر امامؑ کی شخصیت اور زندگی کا عکس ہمیں مختلف انبیاء کی زندگیوں اور شخصیات میں کسی نہ کسی انداز میں نظر آجائےگا۔ امام علیؑ اور اپنا ذکر کرتے ہوئے رسولِ کریمؐ نے موسیؑ و ہارونؑ کا […]

میں نے ایک بات بہت شدت سے محسوس کی ہے کہ امام علیؑ سے لیکر امام العصرؑ تک، ہر امامؑ کی شخصیت اور زندگی کا عکس ہمیں مختلف انبیاء کی زندگیوں اور شخصیات میں کسی نہ کسی انداز میں نظر آجائےگا۔ امام علیؑ اور اپنا ذکر کرتے ہوئے رسولِ کریمؐ نے موسیؑ و ہارونؑ کا ذکر کیا۔ امام حسنؑ نے اپنی صلح کو بذاتِ خود اپنے جد کی صلح حدیبیہ سے نسبت دی، امام حسینؑ نے اُس ذبح عظیم کا وعدہ پورا کیا جسے اللہ نے ابراہیمؑ و اسماعیلؑ کی موخر قربانی کا جزیہ قرار دیا تھا، واقعہ کربلا کے بعد امام سجادؑ کی طویل اور صبر آزما تبلیغ و جد و جہد کو یاد کریں تو نوحؑ کی تبلیغ یاد آتی ہے، پھر ایک ایک کرکے ہر امامؑ کے حالات زندگی کو یاد کرتے جائیں۔

قید، جبر، جلا وطنی اور بلاخر حاکمِ وقت کے ہاتھوں شہادت۔ انبیاء کو انسانوں کی اکثریت کی مخالفت کا سامنا کرنا پڑا اور یہی صورتحال ائمہؑ اہلیبیتؑ کے ساتھ رہی۔ خود کو دینِ محمدؐ کا ماننے والوں نے اہلیبیتِؑ محمدؑ سے جنگیں کیں اور ان پر ظلم کے پہاڑ توڑے۔ انبیاءؑ کے ماننے والے ہمیشہ تعداد میں کم رہے اور اُنہیں بھی ظالموں کے ظلم کا سامنا رہا۔ ائمہؑ اور محبانِ اہلیبیتؑ کے ساتھ بھی یہی معاملہ رہا۔

فرعون کو اپنی موت کا سبب معلوم ہوا تھا تو اُس نے ہر پیدا ہونے والے لڑکے کو قتل کروانا شروع کردیا تھا۔ وہ چاہتا تھا کہ وہ انسان زندہ ہی نہ رہے جس کے ہاتوں مستقبل میں میری موت لکھی ہے۔ لیکن یہ انتظامِ خدا تھا کہ حجتِ خدا یعنی موسیؑ زندہ رہے اور ان کی پرورش اسی فرعون کے گھر ہوئی۔ خدا ہر شے پر قادر ہے، وہ اپنی حجت کو بچانا چاہے تو مچھلی کے پیٹ میں بھی زندہ رکھتا ہے۔

عباسی حکمرانوں کو بھی معلوم تھا کہ اب اُس مھدیؑ کی آمد متوقع ہے جو ان کے اقتدار کے خاتمے کا باعث بنے گا۔ لہذا ان آمروں نے بھی فرعون کی طرح انتظامات شروع کردئے۔ امام علی نقی الھادیؑ اور آپکے فرزند امام حسن العسکریؑ کو جبرا مدینہ سے جلاوطن کرکے سامرا میں نظر بند رکھا گیا۔ ان عباسی آمروں کی بھی فرعون کی طرح یہی کوشش تھی کہ اول تو مھدیؑ دنیا میں آئے ہی نہ اور اگر آتا ہے تو یہ اُسے قتل کردیں۔

عباسیوں کا امام علی الھادیؑ، امام حسن العسکریؑ اور اُن کے خانوادے کو اس انداز سے نظر بند کرنا اور کڑی نگرانی میں رکھنا اس بات کی دلیل ہے کہ ان وقت کے فرعونوں کے علم میں تھا وہ مھدیؑ جس کا نام اپنے جد محمدؑ کے نام پر ہے، جو اولادِ فاطمہؑ سے ہے، جسے اس کرہ ارض کو عدل و انصاف سے پُر کرنا ہے، وہ اسی خانوادے میں ظہور کرے گا۔ ورنہ خود سوچئے کہ امام حسن العسکریؑ اور اُن کے والد امام علی نقی الھادیؑ کے پاس ایسا کون سا بڑا لاو لشکر تھا جس سے ان عباسیوں کو خطرہ ہوتا؟ کیا ان ائمہؑ نے ان آمروں کے خلاف قیام کا فیصلہ کر رکھا تھا؟ اگر نہیں تو اس قدر بوکھلاہٹ اور تجسس کس بات کا تھا؟ اتنی کڑی نظر بندی کی وجہ کیا تھی؟ کیا وجہ تھی انہیں مدینہ سے جلاوطن کرکے سامرا کے دوردراز مقام پر نظر بند کردیا گیا؟ غور و فکر کرنے والوں کیلئے اس میں واضح نشانیاں ہیں۔

وہ ذاتِ برحق جو موسیؑ کو فرعون کی آںکھوں سے سامنے پروان چڑھوا دے، جو یونسؑ کو مچھلی کے پیٹ میں زندہ رکھے، جس کے اذن سے عیسیؑ صدیوں پرانے مردے زندہ کردیں، جو اسماعیلؑ کی جگہ ایک دنبے کو ذبح کروادے، جو ابراہیمؑ کیلئے بھڑکائی گئی نارِ نمرود کو گلستاں میں بدل دے۔ اُس ذات کیلئے اپنی آخری حجت کو وقت کے فرعونوں کی نظروں سے اوجھل کرکے صدیوں طویل حیات عطا کردینا ناممکن کیسے ہوسکتا ہے؟

گزشتہ دنوں ایک بدبخت ناصبی نے امام زمانہؑ کے خلاف بکواس کرتے ہوئے طنز کیا تھا کہ انبیاء نے خدا کے دین کیلئے قربانیاں دی ہیں، یہ کیسے ممکن ہے کہ ایک شخص کئی صدیوں سے دنیا کی نظروں سے اوجھل ہے تاکہ اُس کی جان محفوظ رہے۔ غور کریں تو ناصبی یہ سوال اُس خانوادے کے وارثؑ کی غیبت کے بارے میں ایسے سوال پوچھ رہے ہیں جس خانوادے نے اپنا کچھ دین کی خاطر قربان کر ڈالا۔ ان بدبختوں کی اہلیبیتؑ سے دشمنی ملاحظہ کیجئے کہ یہ اُس ابوطالبؑ کو بھی کافر کہتے ہیں جس کی آغوش میں ختمی مرتبتؑ نے پرورش پائی، جس کی اولاد دین کی راہ میں قربان ہوگئی اور یہ اسی ابوطالبؑ کے فرزند علی المرتضیؑ اور دخترِ رسولؐ سیدہ فاطمہ الزہراؑ کے وارث یعنی امام مھدیؑ سے یہ تقاضا بھی کرتے ہیں کہ وہ سامنے کیوں نہیں آتے؟

میدانِ کربلا میں خانوادہ رسالتؐ کو بیدردی سے شہید کردینے والے شامی حرامخوروں اور ہر دور میں اہلیبیتؑ رسولؐ سے دشمنی کی حدیں پار کرنے والے اُمویوں اور عباسیوں کے وکیل یہ سوال پوچھتے ہیں کہ یہ آخری وارث (معاذ اللہ) چھپا ہوا کیوں ہے۔ کل کو یہ بدبخت خدا سے بھی سوال پوچھ لیں گے کہ اسماعیلؑ کو قربان کیوں نہ ہونے دیا، دنبہ کیوں بھیج دیا؟ عیسیؑ کو قتل کیوں نہ ہونے دیا، آسمان پر کیوں بلا لیا؟ گویا یہ ناصبی ڈھکے چھپے لفظوں میں یہ کہنا چاہتے ہیں کہ امام علیؑ سے لیکر امام حسن العسکریؑ تک، اولادِ فاطمہ الزہراؑ کو ہر دور میں ہمارے آقا قید و قتل کرتے رہے، اب یہ آخری وارثؑ کو کیوں خدا نے ہماری نظروں سے اوجھل کردیا؟

علامہ طالب جوہری نے “علامات ظہورِ مھدیؑ” کے عنوان سے انتہائی اہم اور جامع کتاب مرتب کی ہے۔ اس میں عقیدہ مھدیؑ، آپؑ کی شخصیت، آپ کی غیبت اور آپؑ کی علاماتِ ظہور پر شیعہ اور سُنی مصادر میں موجود انتہائی اہم معلومات کو تحریر کیا ہے۔ اس کتاب میں آقائے صافی گلپائیگانیؒ کی کتاب “منتخبُ الاثر” کا اقتباس نقل کرتے ہوئے ذکر کیا گیا ہے کہ شیعہ اور سُںی مصادر میں اُن روایات کی تعداد 91 ہے جن میں ذکر ہوا ہے کہ ائمہؑ کی تعداد 12 ہے جن میں پہلے امام علیؑ ہیں اور آخری مھدیؑ۔ اُن روایات کی تعداد 389 ہے جن میں بتایا گیا ہے کہ مھدیؑ خاندانِ رسولؐ سے ہیں۔ اُن روایات کی تعداد 192 ہے جن میں بتایا گیا ہے کہ مھدیؑ اولادِ فاطمہؑ ہیں۔ وہ روایات جن میں ذکر ہوا ہے کہ مھدیؑ نسلِ علیؑ سے ہیں، 214 ہیں۔ وہ روایات جن میں تذکرہ ہے کہ امام مھدیؑ، امام حسینؑ کی نویں پشت سے ہیں، 148 ہیں۔

وہ روایات جن میں بتایا گیا ہے کہ امام مھدیؑ، امام علی بن حسین زین العابدینؑ کی نسل سے ہیں، 185 ہیں۔ وہ روایات جن میں بتایا گیا ہے کہ امام مھدیؑ، امام حسن العسکریؑ کے صاحبزادے ہیں، 146 ہیں۔ جن رویات میں ذکر ہے کہ امام مھدیؑ آخری اور بارہویں امام ہیں، 136 ہیں۔ وہ روایات جو امام مھدیؑ کی ولادت کے متعلق ہیں، 214 ہیں۔ وہ روایات جن میں آپؑ کی طولانی عمر کا تذکرہ ہے اُن کی تعداد 318 ہے۔ وہ روایات جن میں ذکر ہے کہ امام مھدیؑ کی غیبت طویل ہوگی، اُن کی تعداد 91 ہے۔ وہ روایات جن میں ظہورِ مھدیؑ کی بشارت ہے، اُن کی تعداد 657 ہے۔ وہ روایات جن میں ذکر ہے کہ امام مھدیؑ دنیا کو عدل و انصاف سے پُر کردینگے، اُن کی تعداد 123 ہے۔ وہ روایات جن میں ذکر ہے کہ اسلام دنیا میں امام مھدیؑ کے ذرئعے حاوی ہوگا، اُن کی تعداد 47 ہے۔ امام مھدیؑ سے متعلق ذخیرہ احادیث میں کُل روایات کی تعداد 2870 ہے۔

اسی کتاب، یعنی “علاماتِ ظہورِ مھدیؑ” میں علامہ طالب جوہری نے علامہ مرزا حسین نوری طبرسیؒ کی کتاب “کشف الاستار” کا ذکر کیا ہے جس میں اُن چالیس اہلسنت علماء و محدثین کے نام لکھے ہیں جو ولادتِ مھدیؑ کے قائل ہیں۔ اس فہرست میں علامہ معاصر شیخ محمد رضا نے اپنی کتاب “الشیعہ والرجعۃ” میں مزید 22 اہلسنت علماء و محدثین اضافہ کیا ہے اور پھر فاضلِ معاصر علی محمد دخیل نے اپنی کتاب “الامام المھدیؑ” میں اس فہرست میں مزید پانچ علماء کا اضافہ کیا ہے۔ علامہ طالب جوہری نے ان 66 علماء کے نام، ان کی کتابوں کے نام اور امام مھدیؑ سے متعلق ان کے نظریہ کے بارے میں مختصر تبصرے کے ساتھ اس کتاب میں نقل کیے ہیں۔

اسی کتاب میں اُن افراد کی فہرست بھی نقل کی گئی ہے جنہوں نے امام حسن العسکریؑ کی حیات میں یا آپؑ کی وفات کے بعد کے قریبی دور میں امام محمد بن حسنؑ یعنی امام مھدیؑ کی زیارت کا شرف حاصل کیا۔ ان افراد کی تعداد 175 ہے البتہ اگر اُن لوگوں کی فہرست مرتب کی جائے جو زمانہِ غیبت کبری کے طویل دور میں آپ سے ملاقات کا شرف حاصل کرتے رہے تو یہ تعداد ہزاروں تک پہنچتی ہے۔ یہاں علامہ طالب جوہری یہ جملہ لکھتے ہیں کہ ” امام مھدیؑ کے سلسلے میں یہ خدائی منصوبہ تھا کہ مختلف عہد میں آپ کی ملاقاتیں ہوتی رہیں تاکہ آپؑ کے وجود مبارک کو افسانوی اور تخیلاتی نہ قرار دیا جاسکے۔ “

یہ سب تفصیل پڑھتے ہوئے ایک بات تو مجھے سمجھ آگئی کہ عقیدہ مھدیؑ کس قدر اہم اور متفقہ موضوع ہے کہ شیعہ اور سنی، دونوں کے ہاں اس پر اس قدر کثیر مواد موجود ہے کہ سوائے دشمنِ اہلیبیتؑ کے کوئی اور اسے جھٹلا نہیں سکتا۔

امام مھدیؑ کی غیبت صغری کا عرصہ 69 برس پر محیط تھا جس میں اپنے چار نائبین کے ذرئعے لوگوں سے خط و کتابت رکھتے تھے۔ آپ کے پہلے نائب کا نام ابو عمروؒ عثمان بن سعید الاسدی تھا۔ دوسرے نائب کا نام ابوجعفرؒ محمد بن عثمان بن سعید تھا، تیسرے کا نام ابوالقاسم حسین ابنِ روح نوبختیؒ جبکہ چوتھے کا نام ابوالحسن علی بن محمد سمریؒ تھا۔ سنہ 329 ھ میں چوتھے نائب کی وفات کے ساتھ ہی غیبتِ صغری کا دور تمام ہوا اور غیبت کبری کا دور شروع ہوا جو اب تک جاری ہے۔

تحریر کے آخر میں ایک دل کی بات بھی لکھنا چاہوں گا۔ اس بات کو ایک برس یا اس سے زیادہ تو گزر چکا ہوگا کہ میں امام حسن العسکریؑ کے یومِ شہادت یا یومِ ولادت باسعادت پر، یا 15 شعبان، یومِ آمدِ امامِ زمانہؑ پر یہ ارادہ کرتا تھا کہ اس بار میں امام زمانہؑ کی بارگاہ میں اپنی حقیر سی نوکری ادا کروں گا، کچھ نہ کچھ لکھنے کی کوشش کروں گا۔ مطالعہ اور علم نہ ہونے کے باوجود کوشش کروں گا کہ اس موضوع پر لکھوں لیکن لکھ نہ پاتا تھا۔ میرے دل میں بار بار خیال آتا تھا کہ شاید مجھے یہ توفیق ہے ہی نہیں کہ اپنے امامِ وقتؑ کو یاد کرتے ہوئے کچھ لکھوں۔ لیکن گزشتہ دنوں کچھ ایسا ہوا کہ میں نے بار بار دل میں امام زمانہؑ کو یاد کرتے ہوئے ارادہ کیا کہ میں کچھ لکھنا چاہتا ہوں، میری مدد فرمائیں۔

ناصبیوں کی بکواس پڑھ کر مجھے اپنے آپ پر غصہ آرہا تھا کہ کیا میں اس قابل نہیں کہ شر اور رجس کے مقابلے میں اُس ذاتؑ کا کچھ تذکرہ کرسکوں جو وارث آیتِ تطھیر ہے؟ بس پھر دو روز قبل میں نے مولا امام زمانہؑ کو یاد کرتے ہوئے کوشش کی کہ کہاں سے شروع کروں تو بے اختیار سیھات کی جامعہ مسجد کا منظر یاد آگیا۔ اُس کے بعد اسمِ محمدؐ کی لڑی میں موتی خود ہی سجتے چلے گئے، “اولنا محمدؐ، اوسطنا محمدؑ و اخرنا محمدؑ” کے فرمان کی طرح۔

Tags


Share This Story, Choose Your Platform!

Facebook
Twitter
Google+
https://worldshiaforum.org/2020/04/%DB%8C%D8%A7-%D8%A7%D8%A8%D8%A7-%D8%B5%D8%A7%D9%84%D8%AD-%D8%A7%D9%84%D9%85%DA%BE%D8%AF%DB%8C%D8%91-%D9%86%D9%88%D8%B1-%D8%AF%D8%B1%D9%88%DB%8C%D8%B4
LinkedIn
Pinterest

Latest From Twitter